فاتر العقل بڑے انسان از فرخ نور

Submitted by Farrukh Noor on Mon, 09/06/2010 - 16:57

فاتر العقل بڑے انسان

آج کا انسان موسیٰ کے روپ میں فرعونیت کی بد ترین مثال بن چکا ہے۔ لوگ اللہ کو مانتے ہیں مگر اللہ پر یقین نہیں رکھتے۔دُنیا بھر کے متعلق اپنی اعلیٰ ترین فہم و فراست کی حاکمیت بیان کرتے ہوئے تبصرے فرماتے ہیںمگر اپنے طرز عمل سے قوم کی تربیت فرما نہیں رہے۔ دعو یٰ تو بڑی بلند بانگ سے کرتے ہیں، واہ ! خود تو دعوی دار کی اہلیت نہیں رکھتے۔

آج انسان کا المیہ یہ ہے کہ وُہ خود کو بڑا سمجھنے لگ گیا ہے۔ خود ساختگی ایسے بنے بنائے بڑے انسانوں کوخود ہی کھوکھلا کرتی جا رہی ہے،بے ساختگی نے عام سادہ افراد کو بڑا انسان بنا ڈالا۔ اَن پڑھ اَڑیل اور اپنے زعم میں مبتلاعلم یافتہ انسان میں کوئی فرق نہیں۔ بس ایک ظاہری فرق یہی ہے۔ اڑیل نہ تو کسی کی بات سنتا ہے اور نہ سمجھ سکتا ہے، زعم والا کسی کو بات کرنے ہی نہیں دیتا۔ اپنے دماغ کو برہمن کا دماغ سمجھتے ہیں۔ اَن پڑھ جاہل کو کم ازکم ایک فوقیت ضرور ہے ،وُہ کسی کو جاہل نہیںکہتا، زعم والے دوسروں کو تو جاہل کے الفاظ نوازتے ہیں۔ مگر وُہ خود بھی کسی جہلا کی فہرست میں شامل ہوتے ہیں۔

تکبر میں مارا گیا طعنٰہ؛ وُہ انسان زندگی بھر بھگت بھی سکتا ہے، یہی حال زعماءکا ہے۔افسوس! وُہ اپنی جہالت آپ نہیں پہچانتے۔ آج انسان کا معیار اعمال نہیں، دولت ہے، مرتبہ ہے، عہدہ ہےواہ! پوری عمر جس پر اتراتے رہے ، آخر ریٹارڈ کا لفظ عہدہ کے دب دبا کو بے رنگ کر گیا۔یونہی وُہ دولت کیا جو آپ کو تنہا کر چھوڑے، وُہ تکبر ہی کیا جس سے آپ کے کان مرضی کے خلاف سننے سے محروم ہو جائیں۔دُنیا آج اپنے اُصول وضع کرتی ہیں۔حسنِ ظن تو ©’حسنِ © زن‘و’حسن زر‘ سے بدل گیا۔ حسن کے معیار طے کرنے والے خود حسن کے بنیادی اُصول سے محروم ہے۔مخبوط الحواس بڑا انسان معاملات کو balanceکرنے سے محروم ہے۔
شان اور شوکت کبھی نہیں رہے، جاہ و جلال کہیں باقی قائم نہیں رہی، علم اور عمل کسی کی میراث نہیں رہے اگر ایسا واقعتاً ہوتا تو سلطان نورالدّین زنگیؒ، سلطان محمود غزنویؒ اور سلطان شہاب الدّین غوریؒ نے تو حاصل کی گئی ؛ میراث اعمال صالح سے قائم رکھی مگر اُنکی آل اُولاد تک قائم نہ رہ سکی۔ عمل اپنانا پڑتا ،علم و
عمل وراثت نہیں۔

’تاﺅ تہہ چنگ‘ میں ایک مقولہ ہے: ” عزت اور ذلت خوف کی طرح دکھا ئی دیتے ہیں۔“

اِن بڑے لوگوں کو یہ سوچنا چاہیے، وُہ بڑے چھوٹے لوگوں کی وجہ سے ہے۔ جس روزاِن چھوٹے لوگوں نے اُنکو بڑا ماننے سے انکار کر دیا، اُس روز کوئی بڑا ؛بڑا نہ رہے گا۔ یہ ایسے ہی ہے جیسے کوئی گمنام نامور ہو جائے تو نامور گمنام ہو جاتے ہیں، حقیقی رہنما سامنے آجائے تو باقی ر ہنما راہنما نہیں رہتے۔
آج جو اپنے دماغ کو بہترین سمجھتے ہیں، کل ہوسکتا ہے یہ عقل کل نہ رہے۔ایک روزہم تمام کے تصورات نے بھی expireہونا ہے، اگر ایسا نہ ہوتو ارتقاءکا عمل مفقود ہوجائے، ایسے ہوجائے تو ترقی کا زینہ رُک جاتا ہے۔تبھی ہر دور میں مفکرین کی ضرور ت رہتی ہے۔

ایسے عارضی بڑے لوگوں کے دو روپ بھی ہیں،ظاہر تو وُہ خودکو آپکا ہمدردکرتے ہیں، مگر اُن جیسا سفاک کوئی نہیں، ایسے لوگ دُنیا کے نزدیک خود کو دُنیا کا ہمنوا بناتے ہیں، یہی افراد اپنے ماتحتوں کو دنیا کا دوش بنا دیتے ہیں۔ ایسے لوگ کوتلیہ چانکیہ کی سوچ سے مختلف نہیں۔ برسوں قبل بچپن میں ارتھ شاستر کا اِک دیباچہ پڑھا تھا۔کوتلیہ اک گھاس کے میدان سے گزر رہا تھا کہ اُس میدان کی گھاس(کُوسا ) نے اُسکے پاﺅں زخمی کرڈالے، اُس نے گھاس سے بدلہ کچھ یوں لیا، پانی کے ایک برتن میں شکر گھول کر گھاس کی زمین پر ڈال دی، کسی(چندر گپتا موریا، موریا خاندان کا بانی) نے اُس سے پوچھا یہ کیسا انتقام ہے؟ تو اُس کا کہنا تھا؛ میں نے مٹھاس گھاس کی جڑوں تک پہنچا ڈالی ہے ، جس کو چیونٹیاں خود ہی جڑوں سے ختم کر ڈالے گی۔اسی گفتگو کے دوران ہی چیونٹیوں کا لشکرآکر ایسا ہی کرتا ہے۔ چندر اِسکی انتقامی تدبیر دیکھ کر سر جھکالیتا ہے (۱)۔آج ایسے بڑے انسانوں کا کردار اس سے مختلف نہیں۔ آپکی سیاست، ملازمت، خدمت، محنت اور محبت میںآئے روز ایسے کوتلیہ چانکیہ بھی موجود ہے۔ جو خود کو بڑا انسان کہلاتے ہیں۔ جبکہ بڑا انسان اپنے عمل اور کردار سے ہوتا ہے۔

ایسے بڑے انسان کسی کو اپنے سے بڑا دیکھ نہیں سکتے۔ یہ کسی کو اپنے سایہ میں پروان چڑھنے نہیں دیتے۔ خود تو درخت بننے کے گھمنڈ میں مبتلا تو ہوتے ہیں مگر کسی کو اپنی چھاﺅں میں بڑھنے نہیں دیتے۔بلکہ آکاس بیل کی طرح صلاحیتوں کو کھا جاتے ہیں۔ ارتقاءکا عمل مفقود و مفجور کر چھوڑتے ہیں۔

کہتے ہیں، بڑے انسان کا ظرف بھی بڑا ہوتاہے، انداز مثبت ہوتا ہے۔مگر کیسے؟ دُعا دینا باطن کی خوبصورتی ہے، تو دُعا لینا باطن کی مشقت ۔اُولیاءکرام کی سوانح حیات کو زیر مطالعہ لائیے تو ایسے عظیم انسان دُعا دیا کرتے ہیں بددُعا نہیں،منصور حسین بن حلاجؒ جیسے بزرگ کے بارے میں یہ روایت ہے کہ اُن کے جو حامی تھے اُنکے حق میں بھی اُنھوں نے دُعا دی، جو اُنکے مخالفین تھے اُنکے حق میں دوہرے اجر کی دعافرمائی۔ آج بڑے لوگ بھول جاتے ہیں ، اللہ ہر فرعون کے لیئے ایک موسیٰ پیدا کرتا ہے، حیرت انگیز بات یہ ہے بیشمار فرعون خود کو موسیٰ گردانتے ہیں۔ یہ تو زمانے نے طے کرنا ہے موسیٰ کون تھا اور فرعون کون؟ یہ آنے والے مﺅرخ نے طے کرنا ہے ہم نے نہیں۔ ہماری رائے غیر جانبدار نہیں ہوگی بلکہ جانبدارانہ تصور ہوگی۔

(فرخ نور)
حوالہ جات:
(۱)۔وی ۔کے۔ سبرانیم کی کتاب ©"Maxim's of Chankia" کی روایت کے مطابق چندر گپتا موریا اور کوتلیہ چانکیہ کی یہ پہلی ملاقات تھی۔
کوتلیہ چانکیہ کی پیدائش ضلع چکوال کے اہم قصبہ بھون میں ہوئی۔ تقریباً ۶۲۲ قبل مسیح میں مذکورہ بالا پہلی ملاقات چندر گپتا موریا اورکوتلیہ کہ مابین ہوئی۔کوتلیہ چندر گپتا موریا، بندوسارا اوروردھا منا اَشوک کے دور تک وزیراعظم رہا۔ اَشوک اعظم کے عہد میں اس کی وفات ہوئی۔اس کی مشہور کتاب اَرتھ شاسترہندو مذہب کی سیاست کے رُخ متعین کرتی ہے۔ آج بھی ہندوستان کی سیاست اس کتاب سے متاثر نظر آتی ہے۔

Guest (not verified)

Tue, 09/07/2010 - 02:45

آج کے دور میں انسان بھی عجیب صورت حال سے لذت آشناءی حاصل کرنے میں مشغول ہے۔ دنیا اس قدر بدل چکی ہے کہ کسی کی بات پر یقین کرنا بس ایسے ہی ہے جیسے کہا جاءے کہ سانپ ایک بے ضرر جانور ہے۔ بات کو کءی دبیز پردوں میں لپیٹ کر کیا جاتا ہے۔ سمجھنے والا اس قدر اٹینشن کا شکار ہو جاتاہے کہ یقین کر لے یا اس سے کو ءی دوسرا مطلب اخذ کرے۔
پاکستان ہی کی بات لے لیں ۔ یہ ایک مملکت خدا داد ہے۔ اچھے لوگوں کی اس میں کمی نہیں ۔ لوگ محب وطن ہیں۔ ایک دوسرے کے خیر خواہ ہیں۔ مصیبت میں ایک دوسرےکی مدد کو یقینی بناتے ہیں۔ لیکن ایک طبقہ ایسا ہے۔ جو ایسے لوگوں کی کوششوں کو خاک میں ملانے کے در پےہے۔ یہ طبقہ ارباب اختیارات ہے۔ مثلاً جب ملک رحمان صاحب اس بات کا اعلان کرتے ہیں۔ کہ پاکستان خوشحالی کی راہ پر گامزن ہے ، ملک میں بے روزگاری اور مہنگاءی پر قابو پانے کے لءے حکومت ٹھوس اقدامات کر رہی ہے ۔
یا افواج پاکستان کے معتبر ذراءع سے یہ خبر نشر ہوتی ہے کہ ملک کا دفاع مضبوط ہاتھوں میں ہے ۔
ڈرون حملوں کی اجازت نہیں دیں گے ۔ تو ہر پاکستانی یہ سوچنے پر مجبور ہوتاہے کہ بیان کتنا خوبصورت ہے اور عملاً کیا ہو رہا ہے ۔
ایسی پالیسیاں ترتیب دی جاتی ہیں۔ کہ غریب کا جسم خون سے خالی کردیا جاتا ہے۔ اور بظاہر بیان ایسا ہوتا ہے۔ جو غریب کی حمایت میں زمین آسمان کے قلابے ملاتا ہے۔ دفاع کی صورت حال سے کو ن واقف نہیں۔ جب آءے دن ڈرون حملے ہوتے ہیں تو یہ مضبوط ہاتھ نظر نہیں آتے ۔
ہمیں اپنی طاقت ایک چینوٹی سے بھی کم تر محسوس ہوتی ہے۔
میرے ہم وطنو پوری قوم کو متزلزل کرکے اور خود چند روزہ اقتدار میں رہنے کے لءے جو گھناءونا کھیل اس قوم سےکھیلا جاتا یے اب عوام سب کچھ سمجھ چکی ہے۔ میڈیا میں کیسے ہی خوبصورت الفاظ استعمال کر کے اور اپنی بات کو سونے کے اوراق میں لپیٹ کر ہی کیوں نہ کی جاءے حقیقت آشکار ہو ہی جاتی ہے۔
محبت چھپ نہیں سکتی بناوٹ کے اصولو ں سے
خوشبو آ نہیں سکتی کبھی کاغذ کے پھولوں سے ۔
جو ارباب اختیار اپنے ہی مخلص لوگوں سے دغا بازی کرتے ہیں۔ دراصل اپنے ہی پاءوں خود کاٹ رہے ہیں۔
وہ لوگوں کو دھوکہ نہیں۔ بلکہ خود فریبی کا شکار ہیں۔
وہ اپنے آپ کو بڑا نہیں چھوٹا بنانے کی کوشش میں مصروف عمل ہیں۔
وطن سے غداری کر کے اور اپنی طاقت کو استعمال نہ کر کے ملک کو کمزور بنانے والو کبھی تاریخ کے آءینے میں بھی جھانک لیا کرو ۔
محمد بن قاسم کون تھا؟
سلطان صلاح الدین نے کیا خدمات انجام دین ؟
محمود غزنوی کا نام آج تک کیوں درخشنداں ستارے کی طرح چمکدار ہے۔
مسلمانوں کی تاریخ ایک عظیم داستان ہے ۔ جس کو پڑھ کر احساس ہوتاہے۔ کہ یہ دنیا محض ایک پاءوں کی ٹھوکر سے اڑ جانے والی چیز ہے۔
ارادے جن کے پختہ ہوں نظر جن کی خدا پر ہو
طلاتم خیز موجوں سے وہ گھبرایا نہیں کرتے ۔

پھر بھی کوءی بات نہیں۔ تاریخ شاہد ہے مسلمانوں سے بھی کءی بڑی بڑی غلطیاں سرذد ہوءیں۔ جب مجاہدین نے اپنی غلطیوں کا احساس کیا اور اپنے ایمان کو بیدار کیا تو اللہ تعالٰی کی مدد پھر سے شامل حال ہوگءی ۔

گر عثمانیوں پہ کو ہ غم ٹوٹا تو کیا غم ہے
کہ خونِ صد ہزار انجم سے ہوتی ہے سحر پیدا
اور آخر پر میں ارباب اختیار سے ایک سوال پوچھنا چاہوں گا ۔

نہ ادھر ادھر کی تو بات کر یہ بتا کہ قافلہ کیوں لٹا
مجھے راہزنوں سے غرض نہیں تیری رہبری کا سوال ہے۔

ناچیز : علی اکبربٹ

Add new comment

CAPTCHA
This question is for testing whether or not you are a human visitor and to prevent automated spam submissions.
Copyright (©) 2007-2019 Urdu Articles. All rights reserved.
Developed By Solaxim Web Hosting and Development Services
Affiliates: Urdu Books | Urdu Poetry | Shahzad Qais | Urdu Jokes One Urdu| Popular Searches | XML Sitemap Partners: UrduKit | Urdu Public Library

Urdu Articles Is One Of The Largest Collection Of Urdu Articles On Different Topics. You can read articles on topics like parenting, relationship, politics, How to do Things, Shopping Reviews, Life Style, Cooking, Health and Fitness, Islam and Spirituality... You can also submit your articles to get free publicity and fame on your published work. Keep Smiling......