رھنما کی تلاش

Submitted by siaksa on Sun, 08/15/2010 - 19:22

گذشتہ روز نواز شریف صاحب اور وزیر اعظم صاحب کی پریس کانفرنس نظروں سے گذری جس میں دونوں حضرات نے فلڈ ریلف بورڈ کے قیام پر روشنی ڈالی اور اس چیز کا اعادہ کیا کہ سیلاب سے متاثرہ افراد کی شفاف طریقے سے مدد کی جاے گی۔ دونوں حضرات کی اس نیک کاوشوں کو سلام اور سیلاب سے متاثرہ حضرات کی ھرممکنہ امداد کو ملکی سطح پر پھیلانے اور غیر ملکی امداد پر انحصار نہ کرنا واقعی ایک نیک امر ھوسکتا ھے۔ لیکن نواز شریف اور وزیر اعظم صاحب کو اس نیک کام کی ابتدا خود اپنی جیب خاص سے شرورع کرنی چاھیے کیونکہ ھر پاکستانی دونوں لیڈروں کی مالی حالت اچھی طرح اگاہ ھیں۔ پاکستانی قوم کبھی اپنے ھم وطنوں کی مدد سے پھیچے نھیں رھی۔ ماضی میں زلزلے کی تباہ کاریوں اور قرض اتاروں ملک سمبھاروں کی مھم میں جس طرح دل جان سے اگی رھی تھی ساری دنیا اس بات کی گواہ ھے اور پاکستانی قوم کی اپنے ملک اور اس کی عوام کے ساتھ محبت کی معترف ھے۔ لیکن دنیا نے یہ بھی دیکھا کہ قرض اتاروں ملک سمبھاروں کی مھم کی رقم کس عمروعیار کی زنبیل میں غایب ھوی جس کا اج کسی کو معلوم نھیں ھوا۔ اسی طرح زلزلے کی مدد میں ای ھوی دنیا بھر کی امداد کون غایب کرگیا۔ اس سے عالمی سطح پر پاکستان کا امیج بری طرح مجروح ھوا۔ اس ھی بددیانتی کا نتیج ھے اج پاکستان جس برے حالات کا شکار ھے اور عالمی سطح پر جو خاموشی اختیار کی جارھی ھے اس کو مدنظر رکھتے ھوے جناب نواز شریف بھی یہ سوچنے پر مجبور ھوگیے ھیں کہ ھمیں غیر ملکی امداد پر انحصار کرنے کے بجاے ملکی سطح پر پاکستان کی عوام کو متحرک کیا جاے۔ لیکن اس نیک کام کو اس کی اصل روح کے مطابق کرنے کے لیے نواز شریف صاحب اور تمام سیاسی لیڈروں اور قوم کے نمایندوں کو حضرت ابوبکر رضی اللہ عنھہ کے نقش قدم پر چلتے ھوے وھی اقدام کرنے ھونگے جب اللہ کے رسول ö نے دریافت کیا کہ اے ابوبکر کیا کچھ اپنے اھل خانہ کے لیے بھی کچھ چھوڑا ھے یا سارہ کا سارہ اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کے لیے دے دیا۔ اس پر حضرت ابوبکر فرماتے ھیں ان کے لیے اللہ ھی کافی ھے۔ ایسے ھی جذبوں کی ضرورت ھے پاکستان کے لیڈروں کی طرف سے۔ جس ملک نے اور قوم نے ان کو عزت اور احترام ان کو نوازہ اج اس قوم کو مدد کی ضرورت ھے تو اس حالت میں قوم کے لیڈروں کو بھی اپنے خزانوں کے منہ اپنی قوم کی فلاح بھبود کے کھول دینے چاھیے۔ پھر دیکھنا کہ پاکستانی قوم کس طرح اگے اتی ھے۔ پاکستانی قوم ایسی خود دار قوم ھے جو کبھی بھی غیر ملکی امداد اور قرضوں کی محتاج رھی ھو۔ پاکستان کے کسی بھی بڑے تو دور بچے کی بھی راے لی جاے ۔ ھر ذی شعور پاکستانی اس بات کے حق میں ھے کہ پاکستان کو نہ کسی غیر ملکی امداد ضرورت ھے اور نہ کسی قرضے کی۔ ھم کو تو صرف ایک ایسے رھنما کی تلاش ھے جو پاکستان کو دنیا میں عزت کا مقام دلا دے ۔ اج جب ۷۰ فیصد سے زیادہ پاکستان سیلاب کی وجہ پانی میں گھرا ھوا ھے اور اقوام متحدہ کے سربراہ بھی پاکستان کے دورے پر اے ھوے ھیں۔ ایسے میں ساری قوم اور انکے لیڈروں کو چاھیے کہ ایک زبان ھوکر صرف اور صرف ایک مطالبہ اقوام متحدہ اور ورلڈ بنک کے سامنے رکھیں کہ پاکستان کے قرضے معاف کیے جاییں۔ ھمیں صرف قرضوں سے نجات چاھیے۔ پاکستان کی تمام جماعتیں اور قوم کا صرف اور صرف اقوام عالم سے ایک مطالبہ ھونا چاھیے کہ پاکستان کے سارے قرضے معاف کیے جاییں۔ خدارہ ھم کو کؤخود انحصاری کی طرف قدم بڑھانے دو۔ ھوسکتا ھو کہ اللہ کی دی ھوی ازمایش ھی ھم کو ایک متحد اور خود پر بھروسا کرنی والی قوم بنادے۔

Guest (not verified)

Tue, 08/24/2010 - 08:32

AOA,
i m Zubair Ali Shail

Nice ur mind

Add new comment

CAPTCHA
This question is for testing whether or not you are a human visitor and to prevent automated spam submissions.
Copyright (©) 2007-2019 Urdu Articles. All rights reserved.
Developed By Solaxim Web Hosting and Development Services
Affiliates: Urdu Books | Urdu Poetry | Shahzad Qais | Urdu Jokes One Urdu| Popular Searches | XML Sitemap Partners: UrduKit | Urdu Public Library

Urdu Articles Is One Of The Largest Collection Of Urdu Articles On Different Topics. You can read articles on topics like parenting, relationship, politics, How to do Things, Shopping Reviews, Life Style, Cooking, Health and Fitness, Islam and Spirituality... You can also submit your articles to get free publicity and fame on your published work. Keep Smiling......