جسٹس افتخار، کی قربانی

Submitted by arifmahi on Wed, 03/12/2008 - 19:34

’ جسٹس افتخار، کی قربانی ‘

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس افتخار محمد چودھری کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ وہ (جسٹس افتخار) ملک میں قانون کی سربلندی کے لیے اپنی زندگی بھی خطرے میں ڈالنے کو تیار ہیں۔
برطانوی اخبار ڈیلی ٹیلیگراف کو دیے گئے ایک انٹرویو میں جسٹس افتخار کے بڑے بیٹے ارسلان نے کہا ہے کہ ان کے والد پاکستان کی عدالتی تاریخ میں بہترین جج کے طور پر پہچانے جانا چاہتے ہیں اور ہر آدمی کو انصاف مہیا کرنے کے لیے وہ کوئی بھی قربانی دینے کو تیار ہیں۔

جسٹس افتخار نے جنرل مشرف کے دوبارہ صدر منتخب ہونے اور صدر اور آرمی چیف کے عہدے بیک وقت اپنے پاس رکھنے کے خلاف دو مختلف درخواستوں کی سماعت کے لیے سپریم کورٹ کے ججوں پر مشتمل ایک نو رکنی بینچ تشکیل دیا ہے۔

ٹیلیگراف کے مطابق جسٹس افتخار چودھری، جنہیں جنرل مشرف نے مارچ میں برخاست کرنے کی کوشش کی تھی، کئی مہینوں سے اپنے سرکاری گھر میں ایک قیدی کی طرح رہ رہے ہیں۔ وہ گھر سے صرف عدالت کے لیے یا پھر وکلاء سے ملنے کے لیے نکلتے ہیں۔

ٹیلیفون بگنگ
والد کی بحالی کے بعد گھر کی سکیورٹی نصف کر دی گئی ہے اور خفیہ ذرائع سے ٹیلیفون سننے کا عمل بھی پہلے سے کم ہوگیا ہے

ڈاکٹر ارسلان

اخبار کے مطابق جسٹس افتخار اور ان کے اہلخانہ اپنی زندگیوں کو لاحق خطرات کے باعث اب گھر سے کم ہی نکلتے ہیں۔ ارسلان کا کہنا تھا ’ابّا کو طویل چہل قدمی پسند ہے ۔۔۔ لیکن سکیورٹی تحفظات کی وجہ سے اب وہ ایسا نہیں کر پاتے۔‘

ارسلان نے بتایا کہ ان کے والد کی بحالی کے بعد ان کے گھر کی سکیورٹی نصف کر دی گئی ہے اور (خفیہ ذرائع سے) ٹیلیفون سننے کا عمل بھی پہلے سے کم ہوگیا ہے۔

سنگ مرمر سے تعمیرشدہ اور سر سبز مارگلہ پہاڑیوں کے دامن میں واقع جسٹس افتخار کے گھر کے ڈرائنگ روم کی دیواروں پر قرآنی آیات پر مبنی کیلیگرافی کے نمونے آویزاں ہیں۔ جسٹس چودھری کے دوستوں کا کہنا ہے کہ وہ (چیف جسٹس) اپنی بحالی کے لیے خدا کے شکر گزار ہیں اور ان کے بقول وہ اس سے اور زیادہ مضبوط ہوئے ہیں۔

نو مارچ کو چیف جسٹس افتخار چودھری کی معطلی اور اس کے بعد پیش آنے والی مشکلات پر تبصرہ کرتے ہوئے ان کے اہل خانہ کا کہنا تھا کہ ان صعوبتوں نے انہیں پہلے سے بھی زیادہ ایک دوسرے کے قریب کر دیا۔

اٹھاون سالہ جسٹس افتخار چودھری اپنی چھیالیس سالہ اہلیہ فائقہ، بیٹوں ارسلان (28) ، بالاچ (6) اور تین بیٹیوں عائشہ (28)، افرا (20) اور پلوشہ (16) کے ساتھ رہتے ہیں۔

مضبوط اعصاب والد مضبوط اعصاب کے حامل ہیں۔ وہ ہم سے کبھی بھی کسی ڈر یا خوف کا ذکر نہیں کرینگے

بیٹی عائشہ

معطلی کے بعد جسٹس افتخار کی پولیس کے ہاتھوں توہین اور وکلاء پر لاٹھی چارج کے مناظر ٹی وی پر نظر آنے پر ہزاروں لوگ احتجاجاً سڑکوں پر نکل آئے تھے۔ جسٹس افتخار کے بیٹے ارسلان کہتے ہیں: ’ہمارے حوصلے اس وقت بڑھے جب ہم نے عوام کو اپنے ساتھ پایا۔‘

(جسٹس افتخار کے خلاف صدراتی ریفرنس میں لگائے گئے الزامات میں اپنے بیٹے ڈاکٹر ارسلان کا بلوچستان کی صوبائی حکومت سے وفاقی پولیس سروس میں اثر و رسوخ استعمال کر کے تبادلہ کرانا سرفہرست تھا)۔

جسٹس افتخار کی بیٹی عائشہ بتاتی ہیں کہ ان کے والد مضبوط اعصاب کے حامل ہیں۔ ’وہ ہم سے کبھی بھی کسی ڈر یا خوف کا ذکر نہیں کرینگے ۔۔۔ انہیں زیادہ فکر عوام کی ہے جنہوں نے ان کا ساتھ دیا اور یہ کہ انصاف تک عام آدمی کی رسائی کیسے ممکن ہو۔
اب ہم پر فرض ہے کہ ہم اس قربانی کو کس تناظر میں دیکھتے ہیں اور ان کا کتنا ساتھ دعتے ہیں

Add new comment

CAPTCHA
This question is for testing whether or not you are a human visitor and to prevent automated spam submissions.
Copyright (©) 2007-2019 Urdu Articles. All rights reserved.
Developed By Solaxim Web Hosting and Development Services
Affiliates: Urdu Books | Urdu Poetry | Shahzad Qais | Urdu Jokes One Urdu| Popular Searches | XML Sitemap Partners: UrduKit | Urdu Public Library

Urdu Articles Is One Of The Largest Collection Of Urdu Articles On Different Topics. You can read articles on topics like parenting, relationship, politics, How to do Things, Shopping Reviews, Life Style, Cooking, Health and Fitness, Islam and Spirituality... You can also submit your articles to get free publicity and fame on your published work. Keep Smiling......