Ruling Elite

پاکستان : انقلاب کابھوت او ر حکمران اشرافیہ ۔ By: ibn-e-Umeed اِبنِ اُمید

Submitted by Ibn-e-Umeed on Mon, 10/25/2010 - 04:58

ہمارا پیارا ملک پاکستان جسے 1947ء میں گورا صاحب تو آذاد کرکے چل دئیے مگر تب سے ان کے گماشتہ بھورے صاحب (جنہیں ہم عرفِ عام میں حکمران اشرافیہ بھی کہتے ہیں) نے ہمیں غلام بنارکھا ھے جو مٹھی گرم کرنے پر کبھی تو پرائیویٹائزیشن کے نام پر قیمتی صنعتی اور معدنی اثاثے اونے پو نے داموں دورِ حاضر کی ایسٹ انڈیا کمپنیوں کے نام کر دیتے ہیں تو کبھی وسیع و عریض ذرخیز نہری زمینیں کارپوریٹ فارمنگ کی آڑ میں غیر ملکی آقاﺅں کو انعام میں دے دیتے ہیں اور ضرورت پڑنے پر اپنے شہریوں کو غیر ملکی زرِمبادلہ کمانے کےلئے بیچنے سے بھی نہیں چوکتے ۔ حتی کہ سامراج کی جنگ میں پیسے لے کر اپنے ہی شہریوں کا قتلِ عام کر کے فرنٹ لائن سٹیٹ کہلوانے میں بڑا فخر محسوس کرتے ہیں۔

مشہور دانشور ایلن وڈذ کے بقول ہم تاریخ ِانسانی کے اس دور میں رہ رھے ہیں جب سائنس اور ٹیکنالوجی کی پیش رفت نے معجزات کو انسان کیلئے معمول بناکے رکھ دیا ھے۔ آج ایک انسان کو چاند پر بھیجا جاسکتا ھے اور انسان کئی سیٹلائٹ خلاءمیں بھیج کر کائنات اور ارض وسماء کی ان دیکھی وسعتوں اور ان کے اسرارورموز کو اپنی مٹھی میں لاسکتے ہیں اور لا رھے ہیں نیز نت نئی ایجادات نے انسانی زندگی کو نہایت پرآسائش بنا دیا ھے۔ لیکن اسی ترقی یافتہ اکیسویں صدی میں ہم دیکھتے ہیں کہ لاکھوں کروڑوں انسان انتہائی ابتدائی اور قدیم ترین سطح کے معیارزندگی کی طرف بتدریج کھنچے چلے جارھے ہیں ۔ پاکستان جیسے ملک میں حالیہ ہولناک سیلاب سے پہلے بھی یہی کیفیت تھی اور مہنگائی، بیروزگاری ، دہشت گردی اورلوڈشیڈنگ کی ماری بیچاری غریب عوام کا جینا پہلے بھی دوبھر ہوا ہوا تھا جبکہ سیلاب کے بعد کروڑوں انسان زندگی کی رمق ڈھونڈنے میں سرگرداں ہوچکے ہیں اور زندگی ھے کہ اس کا دامن ان کروڑوں محروم ومقہورانسانوں کے ہاتھوں سے چھوٹتاہی چلا جارہاھے۔

آج نفرت،بغاوت اور احساس محرومی کی آگ میں جلتا ہوا پاکستان آتش فشاں کے دھانے پرکھڑا ھے۔ اشرافیہ کا نافذ کردہ موجودہ نظام یا نوٹنکی کی اصلیت اب عوام پر واضح ہو چکی ھے کہ یہ ایک مخصوص طبقے کے مفادات کا تحفظ کر رہا ھے لہذا عوام کی اکثر یت اس نظام سے نا لاں ھے اور اس سے نجات چا ہتی ھے لیکن مراعات یا فتہ طبقہ اس نظام کو ہر حال میں قائم و دائم رکھنا چا ہتا ھے کیونکہ یہ انکے مفادات کا ترجمان اور محافظ ھے۔ پچھلے63سالوں میں چند خاندا نو ں کے غلبے نے پاکستانی عوام کو بغاوت پر آمادہ کر دیا ھے وہی چند چہرے، وہی چند خاندان اور وہی چند نام جو اس ملک کے مقدر کے ساتھ جونکو ں کی طرح چمٹے ہو ئے ہیں اور اسکا خون چوس چوس کر اسے حالتِ نزا ع تک لے آئے ہیں لہذ ا