Ex Chief Jusitice Demond

Submitted by arifmahi on Sun, 03/16/2008 - 19:48

سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کے دو درجن کے قریب سابق ججوں نے جِن میں اِن عدالتوں کے سابق چیف جسٹس صاحبان بھی شامل ہیں، ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ معزول کیے گئے ججوں کو بحال کرنے کے لیے سادہ اکثریت سے پارلیمنٹ کی ایک قرارداد ہی کافی رہے گی۔

اِن ججوں میں شامل لاہور ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس ریٹائرڈ جسٹس خلیل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ آئین میں ایک نام نہادشق 270aaa کی شمولیت بے معنیٰ بات ہے۔

اُن کے بقول: ’یہاں تو نظریہٴضرورت کا بھی اطلاق نہیں ہوتا، حالانکہ اگر نظریہٴ ضرورت کا اطلاق ہو تب بھی ڈکٹیٹر کو اپنے اقدامات کی پارلیمنٹ کی دو تہائی اکثریت سے توثیق کرانا پڑتی ہے۔‘

موجودہ صورتِ حال کا ذکر کرتے ہوئے ریٹائرڈ جسٹس خلیل الرحمٰن نے کہا کہ ’یہ خدا کی طاقت ہے اُس سے بھی کہیں اوپر سے آتے ہیں کہ میں نے جو کہہ دیا ہے وہ آئین کا حصہ بھی بن گیا اور اُس کو کوئی نیچے اوپر نہیں کر سکتا۔‘

واضح رہے کہ پیر کے روز نو منتخب اسمبلی کا اجلاس ہو رہا ہے اور اِس اسمبلی میں اکثریت حاصل کرنے والی جماعتوں نے 30دن کے اندر معزول ججوں کو بحال کرنے کا معاہدہ کیا ہوا ہے۔

اٹارنی جنرل سمیت حکومت کے حامی وکلا اگرچہ دو تہائی اکثریت سے ججوں کی بحالی کی بات کرتے ہیں لیکن عدالتی دنیا میں اُن کا ہم خیال ملنا مشکل ہو گیا ہے۔

دریں اثنا وکلا نے یہ بھی اعلان کر رکھا ہے کہ اسمبلی کے اجلاس کےساتھ ہی وہ 30 دن کی الٹی گنتی شروع کر دیں گے اور اتوار کو پاکستان بار کونسل نے اپنے اجلاس میں ہر جمعرات کو احتجاج کرنے کے سابقہ فیصلے کی توثیق کر دی ہے۔

Add new comment

CAPTCHA
This question is for testing whether or not you are a human visitor and to prevent automated spam submissions.
Copyright (©) 2007-2018 Urdu Articles. All rights reserved.
Developed By Solaxim Web Hosting and Development Services
Affiliates: Urdu Books | Urdu Poetry | Shahzad Qais | Urdu Jokes One Urdu| Popular Searches | XML Sitemap Partners: UrduKit | Urdu Public Library

Urdu Articles Is One Of The Largest Collection Of Urdu Articles On Different Topics. You can read articles on topics like parenting, relationship, politics, How to do Things, Shopping Reviews, Life Style, Cooking, Health and Fitness, Islam and Spirituality... You can also submit your articles to get free publicity and fame on your published work. Keep Smiling......